چلو پاکستان – حصہ 4

 چائلڈ لیبر کے خاتمے کا جتنا سنا تھا وہ بھی صرف نعرے ہی ہیں۔۔۔ سڑکوں کی مرمت ہو یا ان کا اکھاڑنا، اس میں جو مزدور استعمال ہو رہے ہیں وہ زیادہ تر 12 سال سے کم عمر کے بچے ہی ہیں یا پھر عمر رسیدہ خواتین۔۔۔

جن پھول جیسے ہاتھوں میں کتابیں ہونی چاہیے تھیں۔۔۔ وہ شاید پتھروں سےبھی سخت ہو چکے ہیں۔۔۔ اور وہ معاشرے کی بے حسی کی وجہ سے آج کے معاشرے سے بھی زیادہ بےحس اور سخت گیر ثابت ہوںگے۔۔۔ اور پھر یاد آتا ہے سابق وزیر اعلی پنجاب پرویز الہی کا نعرہ” ہم بنائیں۔۔۔ پڑھا لکھا پنجاب”

لعنت ہے ایسے نعروں پر اور لعنت ہے ان پر جنہیں ایسے معصوم بچے نظر نہیں آتے۔۔۔ کہاں جا رہی ہے ہماری "تعلیم کی مد میں دی گئی امداد” جو ہمیں مل رہی ہے لیکن ہمیں مل ہی نہیں پا رہی۔۔۔

ہم کب تک بچوں کو ان کے بنیادی حقوق سے محروم رکھیں گے۔۔۔ اور کب تک ہم روشن مستقبل کے جھ۔وٹے نعرے لگاتے رہیں گے۔۔۔    اور کب تک ہم صرف  30 فیصد لٹریسی ریٹ کے ساتھ دنیا جیتنے کے جھوٹے خواب دیکھتے اور دکھاتے رہیں گےَ۔۔۔

Advertisements

About عمران اقبال

میں آدمی عام سا۔۔۔ اک قصہ نا تمام سا۔۔۔ نہ لہجہ بے مثال سا۔۔۔ نہ بات میں کمال سا۔۔۔ ہوں دیکھنے میں عام سا۔۔۔ اداسیوں کی شام سا۔۔۔ جیسے اک راز سا۔۔۔ خود سے بے نیاز سا۔۔۔ نہ ماہ جبینوں سے ربط ہے۔۔۔ نہ شہرتوں کا خبط سا۔۔۔ رانجھا، نا قیس ہوں انشا، نا فیض ہوں۔۔۔ میں پیکر اخلاص ہوں۔۔۔ وفا، دعا اور آس ہوں۔۔۔ میں شخص خود شناس ہوں۔۔۔ اب تم ہی کرو فیصلہ۔۔۔ میں آدمی ہوں عام سا۔۔۔ یا پھر بہت ہی “خاص” ہوں۔۔۔ عمران اقبال کی تمام پوسٹیں دیکھیں

4 responses to “چلو پاکستان – حصہ 4

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: