یہ ہے بلاگستان میری جان۔ ۔

آپ سب کو اردو بلاگستان میں خوش آمدید ۔۔۔امید ہے آپ کے پاس اپنی زندگی کی کچھ لمحے فارغ ہونگے یا آپ اپنی زندگی سے اس قدر اکتا چکے ہوں کہ آپ کو کوئی فرق نہیں پڑتا کہ آپ کے کچھ لمحے ضائع ہوں یا سارا دن ہی بغیر کسی مقصد کے گزرتا ہو۔۔۔

ویسے جتنا ٹائم آپ بلاگستان میں گزارتے ہیں۔۔۔ یقین تو نہیں آتا لیکن ہو سکتا ہے کہ مختلف بلاگز پر جھانکتے جھانکتے کچھ سیکھ ہی لیتے ہوں۔۔اب یہ تو نا کہیں کہ میں نےیہ بیان دے کر کچھ دانشور بلاگرز کی علم و فضائل کی توہین کر دی ہے۔۔۔ چھڈو جی۔۔۔

خیر۔۔۔ تو بات پھر سے جوڑتے ہیں۔۔۔ بلاگستان میں آپ سب کو پھر سے خوش آمدید۔۔۔ امید ہے کہ آپ کا یہ سفرِ بلاگستان بہت عمدہ گزرے گا۔۔۔ تو آئیے۔۔۔ میں آپ کو بلاگستان کے بارے میں کچھ تعارف دیتا چلوں۔۔۔

بلاگستان وہ جگہ ہے۔۔۔ جہاں ہربلاگر خود کو دنیا کا نہیں تو کم از کم پاکستان کا سب سے بڑا عالم و دانشور بندہ سمجھتا ہے۔۔۔ یہ الگ بات ہے کہ سمجھنے میں اور ہونے میں بڑا فرق ہوتا ہے۔۔۔ جب بھی کوئی بلاگر ” بلاگ سپاٹ یا ورڈ پریس” پر اپنا نیا بلاگ بنانے کا اہتمام کرتا ہے۔۔۔ تو اس کا مقصد یہ ہوتا ہے کہ حقیقی زندگی میں تو میری کوئی مانتا نہیں۔۔۔ چلو۔۔۔ لکھ کر ہی کچھ چولیں مار لیں۔۔۔ بلاگ پر ہماری کوئی مانے یا نا مانے۔۔۔ ہم بھی کسی کی نہیں مانیں گے۔۔۔

نہیں نہیں۔۔۔ آپ غلط سمجھے۔۔۔ یہاں صرف "دانشور” ہی نہیں۔۔۔ بلکہ ہر طرح کے بلاگر پائے جاتے ہیں۔۔۔ انتہاء پسند بھی ہیں۔۔۔ روشن خیال بھی ہیں اور ترقی پسند بھی۔۔۔ لیکن کچھ بلاگرز کی بدقسمتی سے یہاں کچھ زیادہ ہی انتہا پسند پائے جاتے ہیں۔۔۔ بدقسمتی اس لیے کہ ان بلاگرز کی تبلیغِ روشن خیالی میں اگرکوئی پتھر حائل ہے تو وہ انتہاء پسند ہی ہیں۔۔۔ اوہ ہو۔۔۔ اب یقین نہیں آتا تو آنٹی سے ہی پوچھ لیں۔۔۔

کیا کہا۔۔۔ اب آنٹی کون ہیں۔۔۔ میں نہیں بتاتا بھائی۔۔۔۔ پڑھنا ہے تو یہاں پڑھ لو۔۔۔ میرا وقت کھوٹا نہیں کرو۔۔۔

ہاں جی تو ہم بات کر رہے تھے بلاگرز کی۔۔۔ جناب عالی۔۔۔ بلاگستان کا ایک طبقہ "روشن خیال ریوڑ” کے نام سے جانا اور پہچانا جاتا ہے۔۔۔ اب ریوڑ کس چیز کو کہتے ہیں۔۔۔ وہ مجھے بتانے کی ضرورت نہیں۔۔۔

روشن خیال ریوڑ کی پہلی نشانی یہ ہے کہ وہ بلاگستان پہنچتے ہی اپنی اوقات سے باہر آ جاتے ہیں۔۔۔ ان کے خیال میں جوبات ان کے دماغِ ناچیز میں بچپن سے فٹ کر دی گئی ہے۔۔۔ وہ کبھی غلط نہیں ہو سکتی۔۔۔ ساری دنیا غلط ہو سکتی ہے۔۔۔ لیکن وہ غلط نہیں ہو سکتے۔۔۔ پھر اپنی عادت سے بھی کچھ مجبور ہوتے ہیں کہ انہیں کوئی کہہ دے کہ "یار کوا کالا ہے۔۔۔ تو فورا اٹھ کر کہہ دیں گے۔۔۔ اوبجیکشن ۔۔۔ کوا کبھی کالا نہیں ہو سکتا۔۔۔ میں نے بچپن میں سفید کوا بھی دیکھا ہے۔۔۔ اور پھر مغربی مصنفین کی ایسے ایسے حوالے پیش کریں گے کہ آپ کے کانوں سے دھواں نکلنے لگے گا۔۔۔ آپ کا کام بس ہوشیار رہنا ہے۔۔۔

ان حضرات کو اسلام سے عمومی اور علماء اسلام سے خصوصی خدا واسطے کا بیر ہے۔۔۔ ملک و ملت کی ہر خرابی کا زمہ دار علماء کو ٹھرانا ان کے لیے سب سے آسان کام ہے۔۔۔ آج تک ان بلاگرز کی اتنی تحاریر پڑھنے کے بعد آپ کے اس نا چیز میزبان کو اندازہ نہیں ہو سکا کہ اگر علماء نے کچھ نہیں کیا تو ان کے بھائی نے کیا کارنامہ انجام دیا ہے۔۔۔ اور اگر اسلام ان کے مطلب کا نہیں تو اپنا نام مسلمانوں والا کیوں رکھا ہوا ہے۔۔۔

ان روشن خیالوں میں زیادہ تر خواتین پائی جاتی ہیں۔۔۔ اور کچھ خواتین نما مرد حضرات بھی۔۔۔ ان کی زندگی کا مقصد، مرد حضرات کو بالادستی کے خلاف جنگ جاری رکھنا ہے۔۔۔ اپنی کسی نا کسی تحریر میں خرابی ثقافت، بربادیِ مذہب اور تکلیف ِعورت کا ملبہ مرد حضرات پر ڈالتی نظر آئیں گی۔۔۔ بقول ان کے۔۔۔ ان کے عورت ہونے کا قصور بھی کسی مرد کا ہی لگتا ہے۔۔۔ ورنہ یہ آج مغرب کے کسی بار میں بیٹھی بیر کا مزہ "لے رہے ہوتے”۔۔۔۔ نہیں جی یہ کھلے عام کہتی نہیں۔۔۔ محسوس کرواتی ہیں۔۔۔

 

چلیں کچھ آگے چلتے ہیں۔۔۔ اوہ یہ دیکھیے۔۔۔ اس عجوبہ خلقت سے آپ کی جان پہچان کرواتے چلیں۔۔۔ جی ہاں۔۔۔ یہ بارہ سنگھا ہی ہے۔۔۔

اوہ ہو۔۔۔ جی درست فرمایا۔۔۔ دور سے انسان ہی لگتا ہے۔۔۔ لیکن۔۔۔ صرف دور سے۔۔۔
کیا کہا۔۔۔؟ اس کے سینگھ بارہ نہیں ہیں۔۔۔ دیکھیے غور سے دیکھیے۔۔۔ کچھ سینگھ اس نے کہیں نا کہیں پھنسا رکھے ہیں۔۔۔ قریب مت جائیے۔۔۔ دیکھیں اسے چھیڑیں مت۔۔۔ ورنہ آپ پر منافق، جھوٹا اور کمینہ النفس ہونے کا فتویٰ لگ جائے گا۔۔۔ جی صحیح پہچانا آپ نے۔۔۔ یہ "روشن خیال ریوڑ” کی دوسری قسم ہے۔۔۔ بارہ سنگھے سے مزید تعارف کے لیے۔۔۔ یہاں کلک کریں۔۔۔۔

 

آئیے آپ کو اب روشن خیالوں کی تیسری قسم سے بھی ملواتے چلیں۔۔۔ یہ آپ کو نظر نہیں آئیں گے۔۔۔ لیکن کسی انتہا پسند بلاگر کے بلاگ پر اگر آپ کو فحش یا بیہودہ کلمات نظر آئیں تو سمجھ جائیں کہ اس کارنامے کے پیچھےاسی تیسری مردانہ و زنانہ کمزوری کا ہاتھ ہے۔۔۔ داراصل اپنی خصلت سے مجبور ہیں۔۔۔ بچپن سے مادر پدر آزاد ٹھرے۔۔۔ تو کسی دوسرے کی عزت کرنا اور رکھنا انہیں آتا ہی نہیں۔۔۔ ہم انہیں روشن خیال ریوڑ کا بایاں بازو بھی سمجھتے ہیں۔۔۔ جہاں روشن خیالیوں کو لگتا ہے کہ ان کی دال نہیں گل رہی تو وہ اس تیسری قسم کو چھو کر کے چھوڑ دیتے ہیں۔۔۔ اور پھر ان کے مقابل شرفا کو خود ہی خاموش ہونا پڑتا ہے۔۔۔ کہ جاہلوں اور احمقوں کی بکواس کا کیا جواب دیں۔۔۔ خاموشی ہی بہتر ہے۔۔۔

صبر کریں جی۔۔۔

ہاں جی روشن خیالوں کی یہی تین قسمیں ہیں۔۔۔ اگر مزید قسمیں دریافت ہونگی تو بذریعہ ڈاک آپ کو مطلع کر دیا جائے گا۔۔۔

امید ہے آپ بلاگستان سے اپنا تعارف انجوائے کر رہے ہونگے۔۔

آئیے اب مزید آگے بڑھتے ہیں۔۔۔

یہ حضرات ترقی پسند ہیں۔۔۔ انگریزی ان کی محبوب زبان ہے۔۔۔ اتنی محبوب کہ اردو میں بھی انگریزی الفاظ لکھ کر قارئین کو مرعوب کرنے کی کوشش میں لگے رہتے ہیں۔۔۔ اپنی تحاریر کے سر پاوں کا انہیں خود بھی معلوم نہیں ہوتا۔۔ بس کہیں سے فلسفے اور اردو انگریزی ادب کو ملا کر کچھ نا کچھ لکھ دیتے ہیں۔۔۔ ان کا ماننا ہے کہ لوگوں کو مرعوب کرنے کا سب سے آسان طریقہ انہیں کنفیوز کرنا ہے۔۔۔ اس طرح ان کی پگڑی بھی اونچی رہتی ہے اور دال بھی گل جاتی ہے۔۔۔ ویسے انہیں بلاگستان میں اتنی سنجیدگی سے لیا بھی نہیں جاتا۔۔۔

وہ دیکھیے۔۔۔ یہ کچھ حضرات سر جھکائے بیٹھے ہیں۔۔۔ ان کے پاس کرنے کو کئی کام نہیں۔۔۔ فیس بک سے یاری ہے۔۔۔ کسی کے لیے خطرہ جان یا ایمان نہیں ہیں۔۔۔ بس کبھی کبھی دل کرتا ہے کچھ لکھنے کا تو مہینے میں ایک آدھ پوسٹ لکھ مارتے ہیں۔۔۔ بلاگستان میں ان کا زیادہ تر وقت روشن خیالوں کے بلاگز پر تبصرے کرنے میں اور انہیں سمجھانے بجھانے میں ضائع ہوتا ہے۔۔۔ سنا ہے کہ اسلام کے متعلق روشن خیالوں کےمغلظات کا ڈٹ کر مقابلہ کر رہے ہیں۔۔۔

جی ایک مرتبہ پھر آپ نے درست سمجھا۔۔۔۔ یہی انتہاء پسندِ اردو بلاگستان ہیں۔۔۔ چلیں، ان میں سے کچھ سے آپ کا بالمشافہ تعارف کرواتے چلیں۔۔۔ کیا یاد کریں گے۔۔۔

وہ داڑھی والے مولبی ہیں۔۔۔ بڑا خطرناک بندہ ہے۔۔۔ اس کا خاصہ ہے کہ ایک انگریزی کا حرف کہہ کر ہی اپنا سارا غصہ نکال لیتا ہے۔۔۔

وہ الٹی سیدھی حرکتیں کرتا ہوا بندہ ڈفر ہے۔۔۔ اوے نہیں یار۔۔۔ نام نہیں ہے اس کا۔۔۔ ویسے ہی ڈفر ہے۔۔۔ اسے سیریس مت لینا۔۔۔ ورنہ جان کے لالے پڑ جائیں گے۔۔۔

جی نہیں وہ کوئی جاپانی بلاگر نہیں پاکستانی ہیں۔۔۔ شریف آدمی ہے۔۔۔ لیکن روشن خیال اسے شریف رہنے نہیں دے رہے۔۔۔

اور وہ بچہ جو نظر آ رہا ہے آپ کو۔۔۔ بلاگرِاعظم کہا جا سکتا ہےانتہاء پسندوں کے وقار کو بلند رکھنے میں اس کا بڑا کردار رہا ہے۔۔۔زرا بچ کے۔۔۔ بڑے حوالے نکالتا ہے۔۔۔

دیکھیں۔۔۔ وہ نقلی مونچھیں لگائے "انکل سام کا رہائشی” ہے۔۔۔ حقیقت میں کاکا ہے اپنا۔۔۔ لیکن بڑوں کے ساتھ بیٹھنے کا بڑا شوق ہے اسے۔۔۔بڑی بڑی باتیں کرتا ہے۔۔۔

اور وہ سب کا استاد۔۔۔ بڑا استاد آدمی ہے۔۔۔

حیران مت ہوں۔۔۔ یہ آپ کو کوئی خطرہ نہیں پہنچائیں گی۔۔۔ آپ کو ان کی شکل نظر نہیں آ رہی۔۔۔ آئے گی بھی نہیں۔۔۔ حجاب میں رہنا پسند کرتی ہیں۔۔۔

اور یہ ڈاکٹر ہے جی۔۔۔ روشن خیالیوں کی ناک میں دم کر رکھا ہے اس بندے نے۔۔۔

اہمم اہممم۔۔۔ زرا تمیز سے۔۔۔ ہمارے بزرگ ہیں۔۔۔ انتہا پسند بلاگر انہیں اپنا استاد اور پیرومرشد مانتے ہیں۔۔۔ انتہاء پسندوں کے لیے باعث افتخار ہیں۔۔۔ ۔۔۔سلام کرو انہیں۔۔۔ شاباش۔۔۔

اور یہ جو بندہ فارغ بیٹھا ہے۔۔۔ کبھی کبھی اپنا منہ دکھاتا ہے۔۔۔ لیکن سلوک سب سے بلا امتیاز کرتا ہے۔۔۔

اوئے۔۔۔ کیا کہا۔۔۔ میں کس گروپ کا بندہ ہوں۔۔۔ بڑے فارغ بندے ہو یار۔۔۔ تمہیں اب تک سمجھ نہیں آئی۔۔۔۔۔ ؟؟؟؟

Advertisements

About عمران اقبال

میں آدمی عام سا۔۔۔ اک قصہ نا تمام سا۔۔۔ نہ لہجہ بے مثال سا۔۔۔ نہ بات میں کمال سا۔۔۔ ہوں دیکھنے میں عام سا۔۔۔ اداسیوں کی شام سا۔۔۔ جیسے اک راز سا۔۔۔ خود سے بے نیاز سا۔۔۔ نہ ماہ جبینوں سے ربط ہے۔۔۔ نہ شہرتوں کا خبط سا۔۔۔ رانجھا، نا قیس ہوں انشا، نا فیض ہوں۔۔۔ میں پیکر اخلاص ہوں۔۔۔ وفا، دعا اور آس ہوں۔۔۔ میں شخص خود شناس ہوں۔۔۔ اب تم ہی کرو فیصلہ۔۔۔ میں آدمی ہوں عام سا۔۔۔ یا پھر بہت ہی “خاص” ہوں۔۔۔ عمران اقبال کی تمام پوسٹیں دیکھیں

24 responses to “یہ ہے بلاگستان میری جان۔ ۔

  • DuFFeR - ڈفر

    بس یار جب لوگ اور لوگنیاں اپنے بلاگوں پہ میرا نام لکھتے ہیں تو مجھے بڑا سواد آتا ہے، چاہے وجہ تذکرہ جو مرضی ہو

  • یاسر خوامخواہ جاپانی

    ہاہاہاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    سب انتہا پسند ایک ہی وقت میں ایک جیسا ہی سوچتے ہیں۔
    میں نے مولوی کے بغض میں پاگل ہونے والوں کے متعلق۔۔لکھا ہے۔۔۔کچھ آخرمیں غلط لکھ گیا وہ میرا قصور نہیں ہمارے جاننے والے بندے نے مجھے بتایا تھا کہ حد سے زیادہ مولوی کی مخالفت کرنے والے ایسے بھی ہوتے ہیں۔
    لطف آگیا آپ کی تحریر کا۔
    بہت خوب

  • قاسم

    ایبٹ آباد والے ڈاکٹر کہیں نظر نہیں آتے یا وہ بھی ریوڑ میں پائے جاتے ہیں

    • عمران اقبال

      قاسم بھائی۔۔۔ کونسے ڈاکٹر کا ذکر کر رہے ہیں۔۔۔

      ریوڑ میں تو گنے چنے لوگ نظر آتے ہیں۔۔۔۔ ان میں کم از کم کوئی ڈاکٹر نہیں۔۔۔ یا ہو سکتا ہے کوئی ہو جو شوخی تحریر بکھار رہا ہے۔۔۔

  • جعفر

    چار اقساط میں بھی چھپ سکتی تھی یہ پوسٹ

  • وقاراعظم

    حضور ہمیں بچہ لکھنے اور سمجھنے پر آپ کا بہت بہت شکریہ۔ اب ہم آپ کو کیسے بتائیں کہ یہ سب کچھ پڑھ کر ہمارے دل میں کتنے لڈو پھوٹ رہے ہیں۔ اللہ آپ کو خوش رکھے اور باراسنگھوں کے شر سے بچائے۔ :mrgreen:

  • بلاامتیاز

    جناب ۔ ۔پہلے تو انداز تحریر کی بہت سی داد وصولیئے ہم سے۔۔
    لطف آیا پڑھ کر ۔۔
    میری یہ تعریف تحریر میں بیان کی گئی شخصیات سے قطع نظر ہے
    ۔۔
    مجھے یاد رکھا فیس بک پہ نہ ہونے کے باوجو بھی د۔۔ 🙂
    ویسے میں بھی سوچ رہا ہوں کہ کچھ دن کے لیے فیس بک کا چکر لگا لوں
    ایک صاحب جن کا اپنے زکر بھی کیا ہے وہ ناراض ہیں کچھ، ان کو منانے تو آنا ہی پڑے گا

  • Dr.Jawwad Khan

    مجھے آج تک تعریف کا متانت سے جواب دینا نہیں آیا …..یہی کہ سکتا ہوں کہ ” موگیمبو خوش ہوا ” ):

  • بدتمیز

    باوجود اس کے کہ میں آپ کی اس تحریر کے کچھ مندرجات سے متفق ہوں میں یہ گستاخی کرنا چاہتا ہوں کہ پچھلی تحریر کے بعد اس پوسٹ کی شان نزول؟

    • عمران اقبال

      بد تمیز۔۔۔ بلاگ پر خوش آمدید۔۔۔

      آپ اس تحریر کے کن مندرجات سے متفق ہیں۔۔۔ یہ ضرور بتائیے۔۔۔

      پچھلی پوسٹ سے اگر آپ کی مراد "فکر پاکستان بھائی” کی تحریر ہے۔۔۔ تو میں نے یہی سوچا تھا کہ بارہ سنگھے کے بارے میں اب کچھ نہیں کہوں گا۔۔۔ لیکن پھر اچانک، کچھ حضرات کے بلاگز پر میرے اور یاسر بھائی کے ناموں سے غلیظ تبصرے نمودار ہونا شروع ہو گئے۔۔۔ تو از راہ مزاق مجھے بارہ سنگھے کو پھر سے یاد کرنا پڑا۔۔۔

  • UncleTom

    نقلی موچھیں اور کاکا ہی ہی ہی ۔۔۔۔۔
    کافی مزے کی تحریر ہے

  • hijabeshab

    اچھی تحریر ہے عمران ، اور میری تعریف ٹھیک ہے مگر ایسا بھی نہیں کہ میں کچھ نہیں کہتی ۔۔۔ جب پیچھے پڑ جاؤں تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ باقی کیا لکھوں 😛

  • عمران اقبال

    سب انتہا پسند تبصرہ نگاروں کے انتہاء پسند تبصروں کا انتہائی پسندیدگی کے ساتھ تبصرہ کرنے کا انتہائی شکریہ۔۔۔

    امید ہے چکر لگاتے رہیں گے۔۔۔ اور اپنے مشوروں سے نوازتے رہیں گے۔۔۔

  • جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین

    عمران بھائی!

    آپکی یہ تحریر پڑھی اور بارہا پڑھی اور آپ نے جو انداز بیاں اختیار کیا ہے وہ واقعی ہی "بے اختیار” ہے بارہا پڑھ کر رائے نہیں دے سکا۔ شاید مناسب الفاظ کی کمی کی وجہ سے۔ آپ نے جن نابغہ روزگار شخصیات کا زکر کیا ہے وہ ویسے بھی کم از کم میرے لئیے محترم ہیں کہ انہوں نے اردو بلاگنگ میں نام نہاد روشن خیالی کے نام پہ دین بیزارگی اور قوم کو مایوسی کا پیغام دیتی مخصوص اہداف کو ٹارگٹ کرنے والی تحریوروں اور پاکستانی ریمنڈ ڈیوسوں کو لگام دے رکھی ہے۔ ورنہ جعلی دانشور اور اپنی اصلی زندگی میں انتہائی بودے لوگ ہر نئے پڑھنے لکھنے والے کو سوائے مایوسی اور اسلام بیزارگی بیچنے سے باز نہ آتے۔ خیر وہ اپنی سی کوشش کرتے ہیں اور اپنا سا منہ لیکر رہ جاتے ہیں۔

    پاکستانی قوم اور خاص کر پاکستانی قوم کی اس کلاس کا یہ نیا نیا سفر ہے جو آگے چل کر ایک قومی رائے بنانے پہ اثر انداز ہوسکتی ہے۔ تو انھیں مناسب رہنمائی اور خود اعتمادی مہیاء کرتے یہ احباب آپ سمیت وہ کام سر انجام دے رہے ہیں۔ جس کے بارے میں شاید انھوں نے خود بھی کم ہی سوچا ہو۔

    • عمران اقبال

      محترم جاوید بھائی۔۔۔ آپ کے تبصرے کا بہت شکریہ۔۔۔ جب سے بلاگنگ شروع کی ہے۔۔۔ تب سے اجمل صاحب، یاسر بھائی اور آپ نے اپنے مفید تبصروں سے میری ہمت افزائی اور رہنمائی کی ہے۔۔۔ جس کے لیے میں آپ سب کا بہت ممنون ہوں۔۔۔

      "بے اختیار” ہی مناسب لفظ ہے اس تحریر کی تعریف کے لیے۔۔۔ آپ کو بے اختیار لگی۔۔۔ میرا مقصد پورا ہو گیا اپنے الفاظ کے استعمال کا۔۔۔

      یاسر بھائی کے بلاگ پر سب حضرات نے آپ سے بھرپور فرمائش کر رکھی ہے کہ آپ بلاگ لکھنا شروع کریں۔۔۔ آپ کے اکثر تبصرے بھی کسی بہترین پوسٹ سے کم نہیں ہوتے۔۔۔ امید ہے آپ اس بارے میں سوچیں گے۔۔۔ یقین جانیے کہ میرے جیسے کم عقل اور کم علم لوگ آپ کے انداز بیان اور سوچ سے بہت کچھ سیکھتے ہیں۔۔۔

      روشن خیالوں کی تو بات کرنا مناسب ہی نہیں۔۔۔ مجھے اور میرے جیسے کچھ بلاگرز کو "غیرت بریگیڈ” اور”انتہاء پسند” کے نام سے یاد کیا جاتا ہے روشن خیال ریوڑ میں۔۔۔ لیکن وہ یہ نہیں جانتے کہ ہمیں اس پر فخر ہے کہ ہم انتہا پسند ہیں۔۔۔ کم از کم اللہ کے پیغام کو اپنے طور پر توڑتے مروڑتے تو نہیں۔۔۔

      آپ کے تبصرے کا پھر سے بہت بہت شکریہ۔۔۔ اب اس امید کے ساتھ کہ آپ کو یہ تحریر پسند آئی ہوگی۔۔۔ 🙂

  • شازل

    پتہ نہیں ہم بلاگروں کی کس قسم سے تعلق رکھتے ہیں
    آپ نے بلاگروں کو چھیڑ کر اچھا نہیں کیا۔ کچھ بلاگر اپنے سینگھوں سے آپ کو زخمی نہ کردیں اس بات کا خیال رکھیں۔
    ویسے بارہ سنگھا کر اصطلاح میں نے سنی ضرور ہے لیکن یہ کون ذات شریف ہیں کچھ آئیڈیا نہیں آرہا

  • عادل بھیا

    گویا ہم بلاگر ہی نہیں 😦

  • خرم ابن شبیر

    ہم تو جیسے وہاں کے تھے ہی نہیں 😀
    شاباش بھی شاباش یہ آنٹی کا ذکر پھر کر دیا آپ نے مار تو نہیں کھانی آپ نے

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: