Monthly Archives: ستمبر 2012

حجاب۔۔۔ ساہنوں کی۔۔۔

بھائی حجاب کے بارے میں ان کو لکھنا چاہیے جن کو "حجاب” کی زیادہ ضرورت ہے۔۔۔ ہم کیوں لکھیں۔۔۔ تجربہ یہ کہتا ہے کہ ایک بار کہہ کر اپنا فرض پورا کرو۔۔۔ اب اگلی بات نا مانے تو اس کا مسئلہ۔۔۔ ساہنوں کی۔۔۔

اور ویسے بھی مرد حضرات کو کیا ضروت ہے حجاب کے بارے میں لکھنے کی۔۔۔ ہمیں تھوڑی کرنا ہے "حجاب”۔۔۔ جنہیں کرنا ہے، وہی پریشانی سر لیں۔۔۔ ساہنوں کی۔۔۔

اب پچھلے دنوں کی بات ہے کہ ایک پاکستانی خاتون جو ہماری کمپنی کے لیے کافی میٹیریل سپلائی کرتی ہیں۔۔۔ وہ یہ جانتے بوجھتے بھی کہ میں شادی شدہ ہوں اور ایک بچی کا باپ ہوں، اپنے طور پر مجھ سے "فلرٹ” کر رہی تھی۔۔۔ قسمے "مرد” ہوتے ہوئے بھی ان کی چھچھوری حرکات مجھے سخت ناگوار گزری۔۔۔  اب ایسی خاتون "حجاب” کر بھی لیں تو کوئی "مرد” ان کا کیا بگاڑ لے گا۔۔۔ خیر۔۔۔ ساہنوں  کی۔۔۔

مرد کے لیے حکم ہے کہ اپنی نظریں جھکا کر رکھیں۔۔۔ اور یہی ان کا پردہ ہے۔۔۔  تو مرد حضرات، قسم کھا کر بتاو۔۔۔ کہ کتنی بار "اپنی نظریں” بوقتِ ضرورت جھکا دیں۔۔۔  اگر ایک دو بار کی مجبوری یاد آ گئی ہے تو ۔۔۔ "شاباش”۔۔۔ ورنہ۔۔۔ عورتوں کے حجاب کو چھوڑو۔۔۔ اور اپنی نظروں کی فکر کرو۔۔۔ ورنہ "نظر کا زنا” یاد کر لیں۔۔۔ شاید شرم آ جائے۔۔۔

یارو۔۔۔ یہ عورت بڑی عجیب چیز ہوتی ہے۔۔۔ آج تک کسی سقراط، بقراط یا افلاطون کو ان کی سمجھ نہیں آئی۔۔۔  تو ہم کیسے سمجھ سکتے ہیں۔۔۔  یہ حجاب میں بھی اچھی  یا بری۔۔۔ اور بے پردگی میں بھی اچھی یا بری۔۔۔  مدعہ سارا ہمیشہ مرد حضرات کے سر ہی آنا ہے۔۔۔ اس لیے پیش قدمی کرنا بہتر ہے۔۔۔ اپنی نگاہیں نیچے کر لو۔۔۔ اور چھوڑ دو کسی دوسرے کی ماں بہن کو دیکھنا۔۔۔ اسی طرح کوئی ہماری ماں بہن کو گھورنا بھی چھوڑ دے گا۔۔۔ صحیح بات ہے نا بھائی۔۔۔!!!

چلیں۔۔۔ ہم مرد حضرات خود کو بدلیں۔۔۔ کسی دوسرے کو بدلنا ہو گا تو وہ خود ہی بدل جائے گا۔۔۔  کیا خیال ہے۔۔۔؟

Advertisements

%d bloggers like this: